دسمبر 12, 2019

الفتح کی فتوحات ،کمانڈروں سمیت 28 ہلاک، غنائم، 4ٹینک تباہ

الفتح کی فتوحات ،کمانڈروں سمیت 28 ہلاک، غنائم، 4ٹینک تباہ

الفتح آپریشن کے سلسلے میں امارت اسلامیہ کے مجاہدین نے قندوز، بغلان،میدان اورپکتیا صوبوں میں فوجی مراکز پر حملہ کیا، جب کہ جوزجان اور پکتیکا صوبوں میں 4 اہلکار مجاہدین سے آملے۔

تفصیل کے مطابق منگل اور بدھ کی درمیانی شب صوبہ قندوز ضلع دشت آرچی کے مربوطہ علاقے میں مجاہدین نے دو چوکیوں پر وسیع حملہ کیا،ججس کے نتیجے میں اللہ تعالی کی نصرت سے دونوں چوکیاں فتح اور وہاں تعینات دو کمانڈروں احمدشاہ اورقدوس سمیت 17 اہلکارہلاک جب کہ 7 زخمی اور مجاہدین نے کافی مقدار میں اسلحہ وغیرہ پر غنیمت کرلی۔

دریں اثناء صدر مقام قندوز شہرمیں پولیس ہیڈکوارٹر کے قریب مجاہدین نے پولیس پر حملہ کیا،جس کے نتیجے میں ایک گاڑی تباہ، 4 اہلکار زخمی اور مجاہدین نے دو گاڑیاں قبضے میں لیا۔

دوسری جانب رات گئے صوبہ بغلان کےصدرمقام پل خمری کے حلقہ نمبر3 کے مربوطہ باغ شمال کے علاقے ببرو گاؤں میں واقع فوجی یونٹ پر حملہ کیا،جس میں 8 اہلکار قتل، جب کہ 5 زخمی،3 ٹینک تباہ اور مجاہدین نے اسلحہ وغیرہ بھی غنیمت کرلی۔

صوبہ میدان سے اطلاع ملی ہےکہ منگل کےروز دوپہر کے وقت ضلع نرخ کے غلو غونڈی کے علاقے میں حکمت عملی کے تحت ہونیوالے دھماکہ نے گاڑی تباہ اور اس میں سوار تمام اہلکار لقمہ اجل بن گئے اور رات کے وقت ضلع چک کے قولک گاؤں کے آنتن نامی چوکی پر ہونیوالے حملے میں ایک فوجی قتل اور ایک ٹینک بھی تباہ ہوا۔

رپورٹ کے مطابق بدھ کے روز صبح کے وقت صوبہ پکتیا کے صدر مقام گردیز شہر کے ابراہیم خیل کے علاقے میں فوجی مرکز پر حملے میں ایک فوجی ہلاک اور رات کے وقت چھاونی کے علاقے میں چوکی پر حملے کے دوران 2 پولیس اہلکار زخمی ہوئے، جب کہ منگل کےروز ضلع زرمت کے نیک نام قلعہ کے علاقے میں  گشتی پارٹی پر مجاہدین کے حملے کے سلسلے میں ایک فوجی مارا گیا۔

اسی طرح صوبہ جوزجان ضلع مردیان کے رہائشی دو افغان فوجیوں محمدعظیم  اور محمدکریم ولدان ملا گلدی، جب کہ صوبہ پکتیکا ضلع وڑممئی کے باشندے دو پولیس اہلکاروں عبدالقدوس اور عبدالرحمن فرزندان لونی نے حقائق کا ادراک کرتے ہوئے مخالفت سے دستبردار ہوئے۔

Related posts