دسمبر 14, 2019

فورسز پر حملے ودھماکے، کمانڈر سمیت 24 ہلاک و زخمی

فورسز پر حملے ودھماکے، کمانڈر سمیت 24 ہلاک و زخمی

الفتح آپریشن کے سلسلے میں امارت اسلامیہ کے مجاہدین نے بلخ،کاپیسا، غزنی، کابل، خوست، بدخشان، ننگرہار اور پکتیکا صوبوں میں اعلی حکام اور سیکورٹی فورسز کو نشانہ بنایا۔

آمدہ اطلاعات کے مطابق منگل اور بدھ کی درمیانی شب عشاء کے وقت صوبہ بلخ ضلع خاص بلخ کے شرشرک کے علاقے میں فوجی بیس پر حملے میں ایک فوجی قتل اور عشاء کے وقت بنگلہ کے مقام پر اسی نوعیت حملے میں پولیس اہلکار ہلاک، جب کہ رات گئے ضلع چاربولک کے سبزی کار کے مقام پر دو فوجی مرکز پر ہونے والے حملے میں 3 اہلکار ہلاک جب کہ 5 زخمی  اور منگل کےروز شام کے وقت ضلع نہرشاہی کے خدرخیل کے علاقے میں فوجی کانوائے پر ہونے والے حملے میں ایک اہلکار ہلاک جب کہ دوسرا زخمی ہوا۔اسی طرح منگل کےروز سہ پہر کے وقت ضلع زارع کے پولیس ہیڈکوارٹر پر مجاہدین کے حملے میں 2 اہلکار ہلاک جب کہ 3 زخمی ہوئے۔

دوسری جانب بدھ کےروز صبح کے وقت صوبہ کاپیسا ضلع تگاب کے تترخیل کے علاقے میں بم دھماکہ سے 3 فوجی ہلاک جب کہ 2 زخمی ہوئے۔

دریں اثناء صوبہ کابل ضلع سروبی کے ابریشم تنگی کے علاقے میں مجاہدین کے حملے میں فوجی رینجر گاڑی تباہ اور اس میں سوار اہلکار ہلاک و زخمی ہوئے۔

رپورٹ کے مطابق بدھ کےروز دوپہر کے وقت صوبہ خوست کے صدر مقام خوست شہر کے مجاہد چوک کے قریب حکمت عملی کے تحت ہونے والے دھماکہ سے پولیس رینجرگاڑی تباہ اور اس میں سوار آفسر سمیت 2 اہلکار ہلاک جب ایک زخمی ہوا اور شام کے وقت ضلع باک کے وردگان گاؤں میں اسی نوعیت دھماکہ سے2 پولیس اہلکار زخمی ہوئیں۔

صوبہ غزنی سے اطلاع ملی ہےکہ منگل کے روز مغرب کے وقت ضلع جغتو کے نظرقلعہ کے مقام پر بم دھماکہ سے فوجی ٹینک تباہ اور اس میں سوار اہلکار ہلاک و زخمی ہوئیں جب کہ بدھ کےروز دوپہر کے وقت ضلع دہ یک کے مرکز کے قریب مجاہدین نے پولیس اہلکار کو قتل کردیا۔

دوسری جانب منگل اور بدھ کی درمیانی شب صوبہ بدخشان ضلع بہارک کے شش پل کے علاقے میں مجاہدین کے حملے میں جنگجو کمانڈر غلام شدید زخمی ہوا۔

دریں اثناء صوبہ ننگرہار ضلع بٹی کوٹ کے باریک آب کے علاقے میں مجاہدین کے حملے میں 2 پولیس اہلکار زخمی ہوئیں۔

اسی طرح عشاء کے وقت صوبہ پکتیکا کے صدر مقام شرنہ شہرکے محمدخیل کے علاقے میں چوکی پر ہونے والے حملے میں ایک جنگجو قتل ہوا۔

Related posts