نومبر 22, 2019

جوزجان،غزنی و قندوزحملے،کمانڈروں سمیت18 ہلاک

جوزجان،غزنی و قندوزحملے،کمانڈروں سمیت18 ہلاک

امارت اسلامیہ کے مجاہدین نے جوزجان، غزنی اور قندوز صوبوں میں چوکی، فوجی مراکز اور گشتی پارٹی پر حملہ کیا۔

اطلاعات کے مطابق پیر کےروز شام کے وقت صوبہ جوزجان کے صدر مقام شبرغان شہر کے ترکمن قدوق کے مقام پر دو مجاہدین نے جنگجوؤں پر حملہ کیا،جس میں ایک رینجر گاڑی تباہ ہونے کے علاوہ 2 اہلکار ہلاک جب کہ 2 زخمی ہوئے اور رات گئے ضلع خانقاہ کے شاہ میرزا کے مقام پر فوجی بیس پر مجاہدین نے حملہ کیا،جو دیر تک جاری رہا،جس کے نتیجے میں وحشی کمانڈر آغامراد ہلاک جب کہ 8 شدید زخمی ہوئے۔

دریں اثناء ضلع فیض آباد کے حیدرآباد کے علاقے میں واقع فوجی چوکی پر حملہ کرکے اللہ تعالی کی نصرت سے اس پر قابض ہوئے اوروہاں تعینات شرپسند فرارہونے میں کامیاب ہوئے۔

صوبہ غزنی سے اطلاع ملی ہےکہ پیر کےروز سہ پہر کے وقت ضلع جغتو کے سیاقلعہ کے مقام پر بم دھماکہ سے فوجی ٹینک تباہ اور اس میں سوار 6 اہلکار لقمہ اجل بن گئے، جب کہ شام کے وقت ضلع خوگیانی کے کاریز کے مقام پر مجاہدین کے حملے میں ایک فوجی ٹینک تباہ اور اس میں سوار 5 اہلکار ہلاک ہوئے اور عشاء کے وقت ضلع دہ یک کے یونٹ کے مقام پر واقع فوجی مرکز پر مجاہدین نے میزائل داغے، جو اہداف پر گر کر دشمن کے لیے جانی و مالی نقصانات کے سبب بنے اور رات گئے ضلعی مرکز پر وسیع حملہ کیا،جس کے نتیجے میں دفاعی چوکیاں تباہ ہونے کے علاوہ دشمن کو ہلاکتوں کا سامنا بھی ہوا۔اسی طرح پیرکےروز صدرمقام غزنی شہر کے نوغی کے مقام پر مجاہدین کے حملے میں فوجی بکتربند ٹینک تباہ اور اس میں سوار اہلکار ہلاک و زخمی ہوئے، جب کہ مغرب کے وقت ضلع شلگر کے یرگٹو کے مقام پر چوکی پر مجاہدین نے حملہ کیا،لیکن تفصیل فراہم نہ ہوسکی۔

رپورٹ کے مطابق صوبہ قندوز کے صدر مقام قندوز شہر کے مسکین آباد کے علاقے میں مجاہدین کے حملے میں جنگجو کمانڈر فرید قرقرہ سمیت 3 اہلکار ہلاک جب کہ ایک زخمی اور مجاہدین نے 3 عدد کلاشنکوفیں بھی غنیمت کرلی۔

Related posts