اکتوبر 20, 2019

تخار،قندہار و ہلمند،فورسز پر حملے،22 ہلاک

تخار،قندہار و ہلمند،فورسز پر حملے،22 ہلاک

کمانڈو اور سیکورٹی فورسز کے کاروان، چوکیوں اور مراکز پر امارت اسلامیہ کے مجاہدین نے ہلمند، قندہار اور تخار صوبوں میں حملہ کیا۔

تفصیل کے مطابق جمعہ اور سنیچر کی درمیانی شب صوبہ تخار کے صدر مقام طالقان شہر کے قریب ابدال کے مقام پر مجاہدین نے کمانڈو پر حملہ کیا،جس کے نتیجے میں 6 اہلکار ہلاک جب کہ متعدد زخمی ہوئے۔

صوبہ  ہلمند سے آمدہ رپورٹ کے مطابق جمعہ کےروز مغرب کے وقت ضلع ناوہ کے سرخدوز اور نرئے زابر کے علاقوں میں چوکیوں پر حملوں کے دوران 3 اہلکار قتل اور رابط اہلکار سنیچر کےروز علی الصبح ایک ہیوی مشین گن، ایک کلاشنکوف، ایک مارٹرتوپ اور ایک راکٹ کے ہمراہ مجاہدین تک پہنچنے میں کامیاب ہوا۔ اسی طرح ضلع گریشک کے بازار کے قریب چوکی پر حملے میں 4 فوجی قتل، ایک امریکی گن غنیمت اور نہرسراج کے مقام پر چوکی میں تعینات پولیس اہلکار کو قتل کردیا گیا،جب کہ ضلع سنگین کے پان کیلی کے علاقے میں فوجی مرکز کی چوکیوں پر ہونے والے حملے میں 2 فوجی ہلاک ہوئے۔

رپورٹ کے مطابق جمعہ کےروز صوبہ قندہار ضلع خاکریزشرغی دوراہی کے مقام پر فوجی کاروان پر حملے میں ایک رینجر گاڑی تباہ اور رات کے وقت مذکورہ مقام پر فوجی چوکی پر مجاہدین کے حملےسے ٹاور تباہ اور دشمن کو جانی و مالی نقصانات کا سامنا ہوا، جب کہ جمعہ کےروز شام کے وقت ضلع پنجوائی کے دوآب کے مقام پر  مجاہدین کے اسی نوعیت حملے میں ایک رینجر گاڑی تباہ اور اس میں سوار اہلکار ہلاک و زخمی ہوئے۔

دوسری جانب رات کے وقت ضلع میوند کے قلعہ شاہ میر کے علاقے میں چوکی پر لیزرگن حملے میں 4 فوجی ہلاک جب کہ ضلع معروف کے مرکز اور دفاعی چوکیوں پر ہونے والے حملے میں 3 فوجیوں کی ہلاکت کی اطلاع ملی۔

Related posts