دسمبر 06, 2019

داعش رہنما، کمانڈروں و آفسروں سمیت 63 ہلاک و زخمی

داعش رہنما، کمانڈروں و آفسروں سمیت 63 ہلاک و زخمی

داعش رہنما، فوجی کمانڈروں، آ‌فسروں اور کٹھ پتلی کو امارت اسلامیہ کے مجاہدین نے قندوز، کابل، پروان، غزنی، بلخ، لوگراور جوزجان صوبوں میں نشانہ بنایا۔

تفصیلات کے مطابق سنیچر کےروز دوپہر کے وقت صوبہ قندوز کے صدر مقام قندوز شہر کے دوبلولہ کے علاقے میں کابل انتظامیہ کے ضلع قلعہ ذال کےسربراہ کی گاڑی بارودی سرنگ سے ٹکراکر تباہ ہوئی اور اس میں سوار ضلعی سربراہ احمدفہیم قرلق دو محافظوں کے ہمراہ شدید زخمی ہوا۔

دریں اثناء صوبہ پروان ضلع بگرام کے مربوطہ علاقے بگرام ائیربیس کے سامنے حکمت عملی کے تحت ہونے والے دھماکہ سے پولیس رینجر گاڑی تباہ اور اس میں سوار 3 اہلکار لقمہ اجل بن گئے۔

صوبہ غزنی سے اطلاع ملی ہےکہ جمعہ اور سنیچر کی درمیانی شب صدر مقام غزنی شہر کے پایہ کے علاقے میں مجاہدین کے حملے میں 5 فوجی ہلاک جب کہ 7 زخمی اور  2 ٹینک بھی تباہ ہوئے۔ دریں اثناء ضلع دہ یک کے تاسن کے علاقے میں مجاہدین نے سیکورٹی فوسز پر اسی نوعیت کا حملہ کیا، جس میں 12 اہلکار ہلاک و زخمی اور 3 ٹینک تباہ بھی ہوئے اور انتن کے علاقے میں پولیس مرکز پر مجاہدین نے حملہ کیا، جس میں 6 اہلکار اور 7 زخمی ہوئے۔

ذرائع کے مطابق دشمن کی جوابی فائرنگ سے ایک مجاہد شہید جب کہ دوسرا زخمی ہوا۔ تقبلہ اللہ تعالی

رپورٹ کے مطابق جمعرات اور جمعہ کی درمیانی شب عشاء کے وقت صوبہ کابل ضلع قرہ باغ کے بیٹنی گاؤں کے قریب مجاہدین نے سپیشل فورس کے تین آفسروں کو موت کے گھاٹ اتار دیا ،جب کہ جمعہ اور سنیچر کی درمیانی شب عشاء کے وقت ضلع موسہی کے کوزقشلاق کے مقام پر چوکی پر حملے کے دوران ایک فوجی ہلاک جب کہ دوسرا زخمی ہوا۔

دوسری جانب جمعہ کےروز دوپہر کے وقت صوبہ بلخ کے صدر مقام مزارشریف شہر کے دشت شور کے علاقے میں بم دھماکہ سے فوجی ٹینک تباہ اور اس میں سوار 5اہلکار لقمہ اجل بن گئے اور رات کے وقت ضلع دہ دادی کے پل مامکری کے مقام پر پولیس چوکی پر حملے کے دوران ایک اہلکار ہلاک جب کہ دوسرا زخمی ہوا اور ساتھ ہی ضلع چمتال کے آسیاخان کے مقام پر مجاہدین نے پولیس اہلکار کو قتل کردیا۔

اسی طرح جمعہ کےروز سہ پہر کے وقت صوبہ لوگرکے صدر مقام پل عالم بازار میں حکمت عملی کے تحت ہونے والے دھماکہ سے دو پولیس اہلکار قتل اور ان کی گاڑی تبا ہ ہوئی، جب کہ ضلع محمدآغہ کے گوتگی کے علاقے میں مجاہدین نے دو جنگجوؤں کو موت کے گھاٹ اتار دیا۔

صوبہ جوزجان سے اطلاع ملی ہےکہ جمعہ کےروز صبح کے وقت مجاہدین کے رابط اہلکار نے صدر مقام شبرغان شہر  میں سفاک گلم جم ملیشا جنرل دوستم کے سابق  اہم کمانڈر  اور داعش کے موجودہ اہم رہنما کمانڈر ابراہیم کو قتل کردیا اور رات کے وقت ضلع قرقین کے مرکز میں واقع جنگجوؤں کی چوکی پر مجاہدین نے حملہ کیا، جس میں ایک شرپسند ہلاک جب کہ 2 زخمی ہوئے۔

واضح رہے کہ دشمن کی جوابی فائرنگ سے ایک مجاہد بھی شہید ہوا۔ تقبلہ اللہ تعالی

Related posts