دسمبر 11, 2019

امن کی جانب مثبت اقدام

امن کی جانب مثبت اقدام

آج کی بات

امریکہ کے ساتھ جاری مذاکرات بین الافغانی ڈائیلاگ کے پیش نظر دو دن وقفہ کے بعد منگل کو دوبارہ شروع ہوئے، توقع کی جاتی ہے کہ افغان مجاہد عوام کی توقعات، امیدوں اور امنگوں کے مطابق جارحیت کے خاتمے، وطن عزیز کی آزادی اور ایک مستحکم اسلامی نظام کے نفاذ کے لئے یہ مذاکرات پیش خیمہ ثابت ہوں گے ۔

بین الافغانی مفاہمت کتنی ضروری ہے، اس میں کوئی شک نہیں ہے کہ امارت اسلامیہ افغان تنازع کے حل کے لئے افغانوں کے درمیان ہم آہنگی اور ایک مشترک ہدف کے حصول کے لئے باہمی مفاہمت ضروری سمجھتی ہے، اسی وجہ سے ملک کے ان عناصر کو جنہوں نے ملک کے چالیس سالہ یا امریکی جارحیت کے بعد قومی اور اسلامی خیانت کی حد تک ظالمانہ کردار ادا کیا ہے، برداشت کرنے کے لئے حوصلہ، صبر، تدبر اور دور اندیشی سے کام لیا، تنزل کیا اور ان کے ساتھ ایک میز پر بیٹھ گئے، تاکہ باہمی مفاہمت کے ذریعے ملک میں جاری بحران کے خاتمے سب مل کر کردار ادا کر سکیں اور جہادی قربانیوں کو رائیگاں جانے سے بچانے کی کوشش کریں ۔

امید کی بات یہ ہے کہ اصولی طور پر پوری قوم امارت اسلامیہ کے موقف، امریکی جارحیت کے خاتمے اور اسلامی نظام کے نفاذ کی تائید کرتی ہے ۔

قطر میں منعقدہ بین الافغانی کانفرنس کے اختتام پر ایک اعلامیہ جاری کیا گیا جس میں سب نے متفقہ طور پر ان مطالبات کی منظوری دے دی جو امارت اسلامیہ اور پوری افغان قوم کی ایک اہم خواہش تھی ۔

افغان تنازع اس وقت شروع ہوا جب کچھ لوگوں نے امریکی جارحیت کی حمایت اور اسلامی نظام کی مخالفت کی، کیوں انہوں نے اپنے ذاتی مفادات کے تحفظ کے لئے افغانستان پر امریکی قبضے کو دوام بخشنے پر زور دیا حالانکہ یہ ملک کی تباہی کے مترادف تھا ۔

چونکہ وہ سب اس بات پر آمادہ ہو گئے ہیں کہ وہ امریکی جارحیت سے اظہار نفرت اور اسلامی نظام کے نفاذ پر خوشی کا اظہار کرتے ہیں اس سے ثابت ہوتا ہے کہ قیام امن کی جانب مثبت اقدامات اٹھائے جا رہے ہیں اور امن کی جانب ہم گامزن ہیں ۔

اس کانفرنس کے شرکاء کو چاہیے کہ وہ کانفرنس کی اس قرارداد پر عمل درآمد شروع کرنے کی کوشش کریں جس کے مطابق قیدیوں کو رہا کیا جائے، میڈیا پر توہین آمیز پروپیگنڈہ بند کیا جائے، عوامی افادیت کے حامل مقامات اور عام شہریوں کو نشانہ بنانے سے فریقین گریز کریں، وغیرہ ۔

اگر فریقین اس اعلامیہ پر ذمہ داری اور سنجیدگی کے ساتھ عمل درآمد یقینی بنائیں تو یقینا امن کی راہ میں حائل تمام رکاوٹیں دور ہو جائیں گی ۔ ان شاء اللہ

Related posts