اکتوبر 24, 2020

فتوحات، کافی غنائم، کمانڈروں سمیت 35 ہلاک، 32 سرنڈر

فتوحات، کافی غنائم، کمانڈروں سمیت 35 ہلاک، 32 سرنڈر

الفتح آپریشن کے سلسلے میں امارت اسلامیہ کے مجاہدین نے کٹھ پتلی انتظامیہ کے مراکز اور کاروانوں کو بغلان، ننگرہار، کابل، لوگر، غزنی،جوزجان، بلخ، سمنگان اور پکتیا صوبوں میں نشانہ بنایا، جب کہ بغلان اور پکتیا صوبوں میں 32 سیکورٹی اہلکاروں نے مخالفت سے دستبرداری کا اعلان کیا۔

تفصیل کے مطابق صوبہ بغلان ضلع پل خمری کے خلازئی کے علاقے میں فوجی کاروان پر ہونےوالے حملے میں ایک ٹینک، دو گاڑیاں تباہ، ہلاکتیں اور خواجہ الوان کے علاقے میں ایک ٹینک راکٹ لگنے سے تباہ اور اس میں سوار اہلکار ہلاک و زخمی ہوئے۔ نیز کمیشن برائے دعوت و ارشاد کے کارکنوں کی جدوجہد کے نتیجے میں 15 سیکورٹی اہلکاروں نے مخالفت سے دستبرداری کا اعلان کیا۔جب کہ ضلع نہرین کے سجان کے علاقے میں مجاہدین نے جنگجوؤں کے خلاف کاروائی کا آغاز کیا،جس کے نتیجے میں کمانڈر شاہ سعید کی چوکی فتح، 3 جنگجو ہلاک،2 اہلکار،ایک ہیوی مشین گن، ایک راکٹ، ایک ہینڈگرنیڈ اور 4 کلاشنکوفوں کے ہمراہ گرفتار ہوئے اور ساتھ ہی خواجہ خضر، بزدرہ، دہ مردہ، گاویان، فوزیان نامی گاؤں پر مجاہدین نے قبضہ کرلیا اور دشمن فرار ہوا۔اسی طرح مذکورہ علاقے کے رہائشی جنگجو کمانڈر حنیف کی قیادت میں 13 مسلح اہلکاروں نے مجاہدین کے سامنے ہتھیار ڈال دیے۔

رپورٹ کے مطابق صوبہ ننگرہار ضلع سرخ رود کے خوسا چینہ کے علاقے میں چوکی پرمجاہدین نے حملہ کرکے اللہ تعالی کی نصرت سے اس پر قابض ہوئے اور وہاں تعینات 5 اہلکار، 4 زخمی ہوئے، دو عدد ہیوی مشین گن،،3کلاشنکوفیں،ایک امریکی گن اور دیگر فوجی سازوسامان غنیمت ہوئی۔اسی طرح فتح آباد کے علاقے میں مجاہدین کے حملے میں فوجی ٹینک تباہ اور اس میں سوار4اہلکار ہلاک۔اسی طرح ضلع خوگیانی میں مجاہدین نے اینٹلی جنس سروس اہلکار لقمان ولد حضرت کو قتل کردیا اور بعد میں پولیس اہلکاروں پر ہونےوالے دھماکہ سے ایک اہلکار کی جان لی۔

صوبہ جوزجان سے موصولہ رپورٹ کے مطابق رات کے وقت ضلع آقچہ کے قرہ بوین کے علاقے میں چوکی پر مجاہدین نے حملہ کرکے اللہ تعالی کی نصرت سے اس پر قبضہ کرلیا اور وہاں تعینات اہلکاروں میں سے 8 ہلاک، 2 گرفتار،6کلاشکوفیں،ایک راکٹ وغیرہ غنیمت اور بم دھماکہ سے فوجی ٹینک تباہ اور اس میں سوار 3 اہلکار ہلاک ہوئے۔اسی طرح صدر مقام شبرغان شہر کے علی آبادی کے علاقے میں چوکی پر ہونے والے حملے میں ایک پولیس اہلکار ہلاک ہوا۔

اسی طرح صوبہ لوگر ضلع محمدآغہ کے مرکز کے قریب مجاہدین کے حملے میں 2 جنگجو ہلاک اوردونوں کی کلاشنکوفیں غنیمت ہوئی۔جب کہ صوبہ غزنی کے صدرمقام غزنی شہر کے روضہ کے علاقے میں بم دھماکہ سے ایک فوجی ہلاک اور دوسرا زخمی ہوا۔نیز صوبہ بلخ ضلع چمتال کے سراسیا کے علاقے میں چوکی پر حملے میں ایک جنگجو ہلاک اور دوسرا زخمی ہوا۔

ذرائع کے مطابق صوبہ سمنگان ضلع درہ صف کے ازبک فریدہ کے علاقے میں بم دھماکہ سے کمانڈر تاجک سمیت 4 اہلکار ہلاک ایک زخمی ہوا، جب کہ کابل شہر کے سرائے ہراتی کے علاقے میں مجاہدین نے ایک فوجی جنرل کو موت کے گھاٹ اتار دیا۔

دوسری جانب صوبہ پکتیا ضلع زازئی آریوب میں کابل انتظامیہ کے 4 سیکورٹی اہلکاروں نے طالبان کے سامنے ہتھیار ڈال دیے۔

Related posts