اکتوبر 24, 2020

بغلان و بدخشان،خاتون کمانڈر سمیت 23 سرنڈر، 35 ہلاک، غنائم

بغلان و بدخشان،خاتون کمانڈر سمیت 23 سرنڈر، 35 ہلاک، غنائم

خاتون اور مرد کمانڈروں سمیت بغلان اور بدخشان میں 23 سیکورٹی اہلکاروں نے امارت اسلامیہ کے مجاہدین کے سامنے ہتھیار ڈال دیے، جب کہ دشمن پر حملے اور دھماکے بھی ہوئے۔

بدھ اور جمعرات کی درمیانی شب صوبہ بغلان ضلع گزرگاہ نور کے مرکز پر مجاہدین پر مجاہدین نے وسیع حملہ کیا،جس کے نتیجے میں فوجی بیس کمانڈر سمیت 20 اہلکار ہلاک اور متعدد زخمی ہوئےاور دشمن کو مالی نقصان بھی پہنچا اور مجاہدین نے ایک فوجی کو 4 کلاشنکوفوں، ایک ہیوی مشین گن، ایک راکٹ، ایک ہینڈگرنیڈ اور دیگر فوجی سازوسامان کے ہمراہ گرفتار کرلیا۔

دوسری جانب ضلع نہرین کے سجان علاقے میں کٹھ پتلی دشمن کے دھوکہ میں رہنےوالی خاتون کمانڈر کفتر نے حقائق کا ادراک کرتے ہوئے اپنے 11 مسلح اہلکاروں کے ہمراہ مجاہدین کے سامنے ہتھیار ڈال دیے، جنہوں نے ایک ہیوی مشین گن، ایک راکٹ، 8 کلاشنکوفیں اور دیگر فوجی سازوسامان بھی مجاہدین کے حوالے کردیا۔

اطلاعات کے مطابق صوبہ بدخشان کے صدر مقام فیض آباد کے حلقہ نمبر3 کےمربوطہ علاقے میں سیکورٹی اہلکاروں کو مجاہدین کی کمین گاہ کا سامنا ہوا، جو پانچ گھنٹے تک جاری رہا، جس کے نتیجے میں ایک ٹینک، 2 گاڑیاں تباہ،5 فوجی ہلاک و زخمی ہوئے اور حلقہ نمبر9 میں اسی نوعیت حملے میں 4 فوجی ہلاک،3 زخمی ہوئے، جب کہ  ضلع بہارک کے آریان اور ورینل کے علاقوں مجاہدین نے دشمن پر حملہ کیا،جس کے نتیجے میں اللہ تعالی کی نصرت سےدونوں علاقے فتح ، 3 اہلکار ہلاک اور دیگر فرار ہوئےاور بہارک ہی کے باغ مبارک کے مقام پر مجاہدین کے حملے میں ایک رینجر گاڑی تباہ ہوئی،3 اہلکار ہلاک اور 4 زخمی ہوئے۔

اسی طرح ضلع شہربزرگ میں مجاہدین کے آپریشن کے دوران پایان کوتل اور قصاب نامی علاقوں سے دشمن کا مکمل صفایا اور سابق کمانڈر اصل الدین نے 12 مسلح اہلکاروں کے ہمراہ مجاہدین کے سامنے ہتھیار ڈال دیے، جنہوں نے 2ہیوی مشین گنیں، ایک راکٹ،9 کلاشنکوفیں اور دیگر فوجی سازوسامان مجاہدین کے حوالے کردیا۔

دوسری جانب ضلع وردوج کے یجک کے علاقے میں دشمن پر ہونے والے حملے میں 2 فوجی ہلاک اور 3 زخمی ہوئے۔

Related posts