اکتوبر 27, 2020

شدید جھڑپیں، فتوحات، ٹینک گاڑیاں تباہ، 30 ہلاک، غنائم

شدید جھڑپیں، فتوحات، ٹینک گاڑیاں تباہ، 30 ہلاک، غنائم

سیکورٹی فورسز کی چوکیوں اور کاروان پر امارت اسلامیہ کے مجاہدین نے ہلمند، ہرات، پکتیا، پکتیکا، خوست، بادغیس، کابل اور فراہ صوبوں میں حملہ کیا، جب کہ 5 سیکورٹی اہلکار صوبہ ننگرہار میں مجاہدین سے آملے۔

اطلاعات کے مطابق جمعرات اور جمعہ کی درمیانی شب عشاء کے وقت صوبہ ہلمند ضلع نادعلی کے ناقل آباد کےعلاقے میں چوکی پر مجاہدین نے حملہ کرکے اللہ تعالی کی نصرت سے اس پر قبضہ کرلیا اور وہاں تعینات اہلکاروں میں سے 5 ہلاک جب کہ دیگر فرار اور مجاہدین نے اسلحہ وغیرہ بھی قبضے میں لیا۔

اسی طرح رات گئے ضلع سنگین پیچ کے علاقے میں چوکی پر مجاہدین نے حملہ اور قبضہ کرلیا، وہاں تعینات 6 اہلکار ہلاک جب کہ دیگر فرار ہوئے مجاہدین نے کافی مقدار میں اسلحہ وغیرہ بھی قبضے میں لیا۔

دریں اثناء صوبہ ہرات ضلع چشت شریف کے کورکی کے علاقے میں آنتن نامی چوکی پر مجاہدین نے رابط اہلکار کے تعاون سے حملہ کرکے اس پر قابض ہوئے اور وہاں تعینات 5اہلکار ہلاک ہوئے،جن کے کافی مقدار میں اسلحہ وغیرہ بھی مجاہدین نے قبضے میں لیا۔

نیز صوبہ پکتیکا ضلع وڑممائی کے محمدجمعہ گاؤں کے قریب پولیس پر مجاہدین نے حملہ کیا،جس میں 3 اہلکار ہلاک ،جب کہ 2 زخمی ہوئے اور مجاہدین نے 2 عدد موٹرسائیکل،ایک راکٹ، ایک ہیوی مشین گن اور ایک کلاشنکوف قبضے میں لیا۔

دوسری جانب صوبہ لوگر ضلع ازرہ کے کوزہ چوترہ کے علاقے میں بم دھماکہ سے ایک جنگجو ہلاک جب کہ 2 زخمی ہوئے اور صوبہ پکتیا کے صدر مقام گردیز شہر کے ابراہیم خیل کے علاقے میں فوجی کاروان پر ہونے والے حملے میں 2 ٹینک تباہ ہونے کے علاوہ دشمن کو ہلاکتوں کا سامنا بھی ہوا۔

رپورٹ کے مطابق صوبہ کابل ضلع پغمان میں غلام حیدر چوکی پر پہلے مجاہدین نے دستی بموں اور بعد میں فائرنگ اور ساتھ ہی تازہ دم اہلکاروں کو بھی نشانہ بنایا،جس میں ایک ٹینک اور ایک رینجر گاڑی تباہ ،اس میں سوار اہلکار ہلاک و زخمی اور لیزرگن حملے کے دوران 3 اہلکار ہلاک و زخمی ہوئے۔

ذرائع کے مطابق صوبہ خوست ضلع صبری کے مرکز، گرگیری فوجی یونٹ اور چوکیوں پر مجاہدین نے شدید حملہ کیا،جس میں 6 فوجی ہلاک، متعدد زخمی ہوئے اور تازہ دم اہلکاروں کا ٹینک یعقوبی کے مقام پر دھماکہ خیز مواد کا نشانہ بن کر تباہ ہوا اور اس میں سواراہلکار لقمہ اجل بن گئے۔

رپورٹ میں مزید کہاگیا ہےکہ صوبہ بادغیس ضلع آب کمری کے مربوطہ علاقے میں مجاہدین نے کمانڈو کے کاروان پر شدید حملہ کیا،جو کئی گھنٹے تک جاری رہا، جس کے نتیجے میں 2 کمانڈو ہلاک، 2 زخمی اور دیگر فرار ہوئے، جب کہ صدر مقام قلعہ نو شہر کے جانے والے کاروان پر پھر مجاہدین نے حملہ کیا اور  صوبہ فراہ کےصدر مقام فراہ شہر کے دہ یک ورودی کے مقام پر پولیس چوکی پر دستی بم حملے میں ایک اہلکار ہلاک جب کہ 2 زخمی ہوئے۔

اسی طرح صوبہ ننگرہار ضلع پچیرآگام کے رہائشی 5 سیکورٹی اہلکاروں محمدخان، عجب خان، ہجرت اللہ، ظہور خان اور قاسم نے حقائق کا ادراک کرتے ہوئے مخالفت سے دستبرداری کا اعلان کیا۔

Related posts