اکتوبر 27, 2020

حملے ودعوت، دشمن فرار،9 ہلاک و زخمی، 22سرنڈر

حملے ودعوت، دشمن فرار،9 ہلاک و زخمی، 22سرنڈر

سیکورٹی فورسز پر امارت اسلامیہ کے مجاہدین نے ننگرہار، کاپیسا اور لغمان صوبوں میں حملہ کیا، جب کہ کمیشن برائے دعوت و ارشاد کےکارکنوں کی جدوجہد کے نتیجے میں بغلان، بدخشان، پروان، پکتیا او رننگرہار صوبوں میں 22 سیکورٹی اہلکار مخالفت سے دستبردار ہوئے۔

اطلاعات کے مطابق صوبہ ننگرہار ضلع سرخ رود کے خیرآباد کے علاقے کوشکک کے مقام پر بم دھماکہ سے گاڑی تباہ اور اس میں سوار جنگجوؤں  میں سے 3 موقع پر ہلاک جب کہ 4 زخمی ہوئے۔

دریں اثناء صوبہ کاپیسا ضلع تگاب کے لنڈاخیل کے علاقے میں اسی نوعیت دھماکہ سے ایک جنگجو زخمی اور قلعہ ولی کے مقام پر مجاہدین نے ایک فوجی کو قتل کردیا۔

دوسری جانب صوبہ لغمان کے صدر مقام مہترلام شہر کے شمنگل کے علاقے میں قائم چوکی کو جنگجوؤں نے مجاہدین کے مسلسل حملوں کے بعد چھوڑ کر فرار ہوئے۔

رپورٹ کے کمیشن برائے دعوت و ارشاد امارت اسلامیہ کے عہدیداروں کے جدوجہد کے نتیجے میں صوبہ بغلان ضلع پل خمری کے رہائشی 13 سیکورٹی اہلکاروں عبدالصابر ولد سیف الدین، گل محمد ولد ولی محمد، گل ولی ولد جمعہ گل، فضل حق ولد محمدافضل، اکبرخان ولد گل محمد، پائندہ ولد محمدغنی، عبدالمقیم ولد عبدالحکیم، نوید ولد محمداکبر، تھانیدار ولد علی خان، شاہ سید ولد سیدباچا، روزالدین ولد عبدالہادی، عزیزمحمد ولد حضرت گل ، عبدالجبار ولد رحمت شاہ، جب کہ صوبہ بدخشان  کے نیشکان،تگاب اور ارگو اضلاع کے باشندے 5 سیکورٹی اہلکار محفوظ اللہ ولد عبدالحئی، امان الدین ولد شیرمحمد، محمد یاسین ولد محمد امین، عبدالحفیظ ولد عبداللہ، محمد وزیر ولد عبدالقہار اور صوبہ پروان کے سیاہ گرد اور شینوار اضلاع میں 2  سیکورٹی اہلکاروں عبدالجلیل ولد عبدالجبار اور نبی اللہ ولد محمد دل،اسی طرح صوبہ پکتیا ضلع سمکنی میں ایک فوجی رحمت اللہ ولد عبدالمرجان اور صوبہ ننگرہار ضلع سرخ رود کے رہائشی پراسیکیوٹر محمد نعیم ولد محمدعظیم نے حقائق کا ادراک کرتے ہوئے مخالفت سے دستبردار ہوئے۔

Related posts