فروری 17, 2020

ایئرپورٹ پرحملہ،دھماکے،کمانڈروں سمیت 12ہلاک وزخمی

ایئرپورٹ پرحملہ،دھماکے،کمانڈروں سمیت 12ہلاک وزخمی

امارت اسلامیہ کے مجاہدین نے قندوز، بلخ، خوست اور پکتیا صوبوں میں ایئرپورٹ پر میزائل داغنے کے علاوہ دشمن پر دھماکے بھی ہوئے اورقندوز و ننگرہار صوبوں میں 3 اہلکار مجاہدین سے آملے۔

اطلاعات کے مطابق اتوار کےروز دوپہر کے وقت صوبہ قندوز کے صدرمقام قندوز شہر  میں واقع قندز ایئرپورٹ پر مجاہدین نے میزائل داغے، جو  اہداف پر گر کر دشمن کے لیے جانی و مالی نقصانات کے سبب بنے اور اتوار کےروز   سہ پہر کے وقت  ضلع خان آباد کے موسی زئی کے علاقے میں بم دھماکہ سے فوجی ٹینک تباہ اور اس میں سوار کمانڈر عبدالواحد اور فوجی آ‌فسر روح اللہ  ہلاک جب کہ 2 اہلکار زخمی ہوئے،نیز سہ پہر کے وقت ضلع علی آباد کے حاجی حسین کے علاقے میں اسی نوعیت دھماکہ سے جنگجو کمانڈر سیدنبی شدید زخمی ہوا اور ان کی گاڑی بھی تباہ ہوئی، جب کہ پل خشتی چوکی میں تعینات پولیس اہلکار شفیع اللہ ولد حبیب اللہ نے حقائق کا ادراک کرتے ہوئے مجاہدین کے سامنے ہتھیار ڈال دیے، جنہوں نے ایک کلاشنکوف بھی مجاہدین کے حوالے کردیا۔

دوسریجانب اتوار کےروز  سہ پہر کے وقت صوبہ بلخ ضلع خاص بلخ کے عالم خیل چوک کے علاقے میں واقع فوجی بیس پر سنائیپرگن حملے میں 3 فوجی مارے گئے ، جب کہ دوپہر کے وقت صوبہ خوست ضلع موسی خیل کے سپرہ کے علاقے میں حکمت عملی کے تحت ہونے والے دھماکہ نے 2 فوجیوں کی جان لی۔

دریں اثناء صوبہ پکتیا ضلع زازئی آریوب کے ڈاگو نامی چوکی پر مجاہدین کے حملے میں 2 جنگجو زخمی ہوئے۔

اسی طرح صوبہ ننگرہار ضلع سرخ رود کے بالاباغ اور کاکوخیل کے باشندوں 2 فوجیوں عثمان ولد غلام علی اور عوض آغا ولد عمراخان نے حقائق کا ادراک کرتے ہوئے مخالفت سے دستبردار ہوئے۔

Related posts